Pages

میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

منگل، 30 نومبر، 2021

بوڑھے کے پنشنرز میں شامل ہونے کا 20 واں سال

   30 نومبر 2021 بوڑھے کا یادگار دن ، پنشنر بننے کی 20 ویں سالگرہ اور قومی اسمبلی کے سامنے ، پنشنرز اور ملازمین کے احتجاج میں قیادت ۔


اپنے لئے نہیں پاکستان کے تمام 1 تا گریڈ 14 کے پنشنرز کے لئے ، جن کا مہنگائی کے اِس دور میں گذارہ مشکل سے ہوتا ہے ۔
حکومت پاکستان کو چاھئیے کہ مہنگائی سلیب (انڈکسشن ) برائے فیڈرل و صوبائی ریٹائرڈ ملازمین اِس طرح مقرر کرے ۔ کہ کم از کم پنشن نئے بھرتی/ملازم ہونے والے گریڈ 1 کے برابر ہوجائے ۔ اور ہر سال مہنگائی کے تناسب سے ، ملازمین کی ہر سال بجٹ میں مہنگائی کی وجہ سے بڑھنے والی تنخواہ میں اضافے کا 50٪ کے برابر پنشن میں اضافہ کیا جائے۔
آج جب میں نے سٹیج سے ملازمین کو مخاطب کرتے ہوئے پوچھا ، کہ آپ یہاں اِس لئے جمع ہوئے ہو کہ آپ کا گذارہ نہیں ہو رہا ، لہذا حکومت 10 فروری 2021 کو ملازمین سے کئے گئے ، وزراء کے تحریری معاہدے پر عمل کرے ۔
اگر آپ آج ریٹائر ہوجائیں تو کیا آپ کا گذارہ ہوجائے گا ؟
سب کا جواب تھا نہیں ۔
میں نے کہا کہ آپ نے 60 سال کی عمر پر پہنچ کر لازمی ریٹائر ہونا ہے ۔ آپ پنشنرز کی آواز نہ بنیں ۔ بلکہ اپنی آواز خود بنیں ، کہ ریٹائرمنٹ کے بعد آپ کو مہنگائی کے جن سے لڑنے کے لئے ، خود اپنے حاضر سروس ملازمین اور اپنے منتخب کئے وزراء سے احتجاج نہ کرنا پڑے ۔
اور زندہ رہنے کے لئے روٹی کپڑا اور مکان میسر ہو ۔

٭٭٭٭٭٭٭٭
 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔