Pages

میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

جمعہ، 30 جولائی، 2021

گھٹیا جج اور حرام و سحت کھانے والے ایک وکیل کی کہانی ۔ ایک بہترین جج کی زبانی

سَمَّاعُونَ لِلْكَذِبِ أَكَّالُونَ لِلسُّحْتِ فَإِن جَآؤُوكَ فَاحْكُم بَيْنَهُم أَوْ أَعْرِضْ عَنْهُمْ وَإِن تُعْرِضْ عَنْهُمْ فَلَن يَضُرُّوكَ شَيْئًا وَإِنْ حَكَمْتَ فَاحْكُم بَيْنَهُمْ بِالْقِسْطِ إِنَّ اللّهَ يُحِبُّ الْمُقْسِطِينَ[5:42]

 جسٹس نعیم اختر افغان،نامزد چیف جسٹس   بلوچستان ہائی کورٹ    نےوکلا سے بات کرتے ہوئے بتایا ، "  جب میں  خضدار جیل کا معائنہ کرنے  گیا ۔  تو دورے کے اختتام پر جب میں  باہر نکلنے کے لیے مین گیٹ پر پہنچا ۔تو آخری بیرک کی جالیوں کے پیچھے سے ایک شخص نے آواز دی۔ کیا آپ میری بات سنیں گے۔ میں نے کہا کہ ضرور کیونکہ میں تو آپ لوگوں کو سننے کے لیے آیا ہوں۔ جب   میں اُس کے قریب گیا ۔تو  اُس شخص نے رونا شروع کر دیا۔  میں نے  اُس شخص کو غور سے دیکھا  اور اُس  کو دلاسہ دیا اورپوچھا ،  آپ رو کیوں رہے ہو ۔کیا ہوا ؟اُس  کو بلک بلک کر روتے دیکھ کر میری اپنی حالت بھی غیر ہو گئی تھی ۔‘

 قیدی نے مجھے  بتایا کہ اس کا تعلق کراچی سے ہے اور میں  بے گناہ قید ہوں ۔ اُ س    کا ہسٹری ٹکٹ دیکھنے پر معلوم ہوا کہ اُسے عمر قید کی سزا ہوئی تھی۔  میں حیران ہوا کہ وضع اور قطع سے وہ مجرم لگتا نہیں تو پھر اُس  کو سزا کیسے ہوئی؟ 

جیل کے عملے نے میرے استفسار پر بتایا کہ اس قیدی کو منشیات کے مقدمے میں عمر قید کی سزا ہوئی ہے۔ میں نے قیدی کو کہا کہ اگر آپ منشیات کا کاروبار کریں گے تو پھر سزا تو ہو گی۔اُس کے کہا مائی باپ میں بے قصور ہوں ۔

اُس نے  بتایا :۔ 

" اُس  کی بھتیجی کی شادی کوئٹہ میں ہوئی تھی لیکن یہ شادی صرف ایک سال چل سکی۔ ایک سال بعد لڑکی کی طلاق ہوئی۔اُس  کا کہنا تھا کہ طلاق کے بعد لڑکی واپس کراچی چلی گئی۔ تاہم سسرال کی جانب سے جہیز میں لڑکی کے شوہر کو جو سامان دیا گیا تھا اس کی واپسی کے لیے کوئٹہ کی فیملی کورٹ میں درخواست دائر کی گئی تھی۔ جب فیملی کورٹ سے لڑکی کے حق میں فیصلہ آیا تو جو سامان واپس کیے جانے تھے۔ ناظر نے اس کی فہرست تیار کی اور سامان لڑکی کے حوالے کرنے کا بندوبست کر دیا۔  جہیز کے سامان کو منتقل کرنے کے لیے  وہ کوئٹہ کے ٹرک اڈاگیا ۔ جہاں ایک ٹرک والے سے کرایہ طے ہوا۔ ٹرک والے سے یہ طے پایا کہ وہ اگلی صبح آئے گا اور سامان لے کر کراچی کے لیے روانہ ہوں گے۔ جب اگلی صبح ٹرک آیا تو اس میں سامان رکھ دیا گیا۔ قیدی سامان رکھنے کے بعد ڈرائیور کے ساتھ فرنٹ سیٹ پر بیٹھ گیا اور وہ کراچی کے لیے روانہ ہو گئے۔ جب وہ کراچی کے قریب اوتھل پہنچے تو چیک پوسٹ پر گاڑی کو روک دیا گیا۔ پھر وہ ہوا جو قیدی کے خواب و خیال میں نہیں تھا۔ قیدی نے بتایا کہ ایک اہلکار آیا اور یہ پوچھا کہ یہ سامان کس کا ہے؟  تو میں نے کہا کہ میرا ہے۔ اہلکار نے بتایا کہ ہماری اطلاع یہ ہے کہ اس ٹرک میں منشیات ہیں۔ میں نے کہا کہ نہیں اس میں کوئی ایس چیز نہیں بلکہ بچی کے جہیز کاسامان ہے۔ پلنگ ،دیگر فرنیچر اور بسترہیں۔جو اہلکاروں کو بھی نظر آرہا تھا ۔ 

 قیدی  نے تلاشی کے لیے آنے والے اہلکاروں کو رسید دکھائی، ناظر کی رپورٹ دکھائی، اجرا کا حکم دکھایا لیکن انھوں نے مجھے اور ڈرائیور کو نیچے اتار دیا۔  جب سامان اتارنے کے بعد ٹرک کے پچھلے فرش کو اکھیڑا گیا تو وہاں خفیہ خانوں میں منشیات تھی اور اس میں پانچ سو پیکٹ چرس چھپائی گئی تھی"۔ 

 چیف جسٹس نے وکیلوں کو بتایا  کہ چرس کی برآمدگی کرنے والے اہلکاروں نے دونوں کو گرفتار کر لیا۔  تفتیشی افسر نے دونوں افراد کا چالان کیا اور سیشن جج نے  دونوں کو عمر قید کی سزا سنا دی۔میں نے قیدی سے پوچھا  کہ آپ نے اپنی بے گناہی کا کوئی ثبوت  کیوں نہیں پیش کیا ۔ جب ہی تو   آپ کو سزا ہوئی۔

 قیدی نے بتایا کہ اُس  اپنے  نے دفاع میں تمام دستیاب دستاویزات اور دیگر ثبوت پیش کیے ۔لیکن سیشن  جج صاحب نے  اُس کے باوجود سزا سنا دی۔

 جسٹس نعیم اختر افغان نے کہا کہ میں نےقیدی سے پوچھا کہ ہائیکورٹ میں ان کی اپیل کی اگلی سماعت کب ہے؟   تو معلوم ہوا کہ گذشتہ تین سال سے ہائیکورٹ میں ان کی اپیل کی کوئی سماعت نہیں ہوئی۔ 

 وکلا کو مخاطب کرتے ہوئے جسٹس نعیم اختر افغان  کا کہنا تھا کہ ،۔

"یہ بات ذہن میں رکھنا چائیے کہ میں انصاف  کے  نظام میں بہتری کی بات کررہا ہوں۔"

 جسٹس نعیم اختر افغان نے بتایا کہ خضدار سے واپسی پر وہ اپنے چیف جسٹس کے پاس گئے اور انھیں اس شخص کی کہانی بتائی اور ان سے درخواست کی کہ اس کیس کو میں خود سنوں گا۔

  چیف جسٹس نے میری ستائش کی اور کہا کہ یہی تو کرنے کی بات ہے آپ مجھ سے کیوں پوچھتے ہو۔؟

  جسٹس نعیم اختر افغان نے کہا کہ وہ اس وکیل کا نام نہیں لیں گے تاہم اگر وہ اس پنڈال میں بیٹھے ہیں تو ان کو یاد آ جائے گا۔ 

  جسٹس نعیم اختر افغان  نے بتایا ۔ " رات کو میں نے قیدی پر مقدمے کی فائل پڑھی تو اس کے ہر صفحے پر اُس کی بے گناہی کے سوا اور کچھ نہیں تھا۔' انھوں نے کہا کہ ،" میں حیران ہوا کہ ثبوت نہ ہونے کی باوجود میرے ساتھی جج صاحب نے ان کو سزا کیسے دی؟۔

 نامزد چیف جسٹس نے وکلاء کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ۔" یہ دیکھنے کے لیے کہ ہائیکورٹ میں سزا کے خلاف اپیل لگنے کے بعد اس کی سماعت کیوں نہیں ہوئی؟  میں نے مقدمے کے آرڈر شیٹس دیکھیں ۔ آرڈر شیٹس پر قیدی کے وکیل کی بار بار غیر حاضری پائی گئی۔ مجھےاس پر بھی بہت زیادہ تکلیف ہوئی کہ وکیل نے غیر ذمہ داری کا مظاہرہ کیوں کیا؟۔ 

 نامزد چیف جسٹس نے بتایا کہ اگلے دن جب سماعت کے لیے قیدی کی اپیل کی باری آئی ، تو نوٹس ہونے کے باوجود وکیل پھر نہیں آیا۔ 

انھوں نے کہا کہ،میں نے اپنے سٹاف کو کہا کہ وکیل کو فون کریں اور اُسے   وہ جہاں کہیں بھی  ہو بلا لیں ۔

 وکیل ساڑھے بارہ بجے میرے سامنے پیش ہوا۔ میں نے وکیل سے پوچھا کہ آپ کا کیس ہے، کیوں ظلم کر رہے ہو، کیس کیوں نہیں چلا رہے۔؟ 

نامزد چیف جسٹس نے بتایا کہ وکیل کا جواب یہ تھا ،"یہ ظالم میری فیس نہیں دیتا"۔ 

  جسٹس نعیم اختر افغان کا کہنا تھا کہ انھوں نے قیدی کے وکیل کو کہا کہ آپ کو ایک اور موقع دیتا ہوں۔ 

جسٹس نعیم اختر افغان نے بتایا ، میں نے قیدی کے وکیل کو کیس کی فائل پڑھنے کی مہلت دی مگر اگلے دن جب وکیل آیا ،تو اُس نے فائل ابھی تک  نہیں پڑھی تھی

 ان کا کہنا تھا کہ ’چونکہ اس قیدی سے منشیات کی برآمدگی کا کوئی ثبوت نہیں تھا جس پر میں نے ان کو پانچ منٹ میں بری کر دیا۔ 

 نامزد چیف جسٹس نے کہا کہ ’یہ ایک  تلخ  حقیقت ہے جس میں بہت سارے سوال ہیں اور بہت سارے کردار ہیں۔ 

کس نے کہاں ٹھیک ہونا ہے؟

میری کیا ذمہ داری ہے؟

 اور آپ کی کیا ذمہ داری ہے؟۔

نامزد چیف جسٹس نے کہا ۔ " میں تو قسم کھا رہا ہوں کہ میں اپنی ذمہ داری پوری کروں گا چاہے مجھے اس کے لیے کتنے کڑوے گھونٹ کیوں نہ پینے پڑیں" ۔

 انھوں نے وکلا سے سوال کیا کہ

 ’آپ لوگ بتا دیں کہ آپ اپنی ذمہ داری پوری کریں گے یا نہیں؟‘

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

اُفق کے پار رہنے والے میرے پیارے فیس بُک کے دوستو ۔

 کیا کبھی ہم نے اللہ کی آیات کی روشنی میں اپنا محاسبہ کیا ہے ، یا 

ھارو سکوپ کی تحاریر کی طرح اچھی باتیں خود اور بُری باتیں دوسروں سے منسوب کر دیتے ہیں ۔

 اُفق کے پار رہنے والے میرے پیارے فیس بُک کے دوستو ۔

 آئیں اپنا محاسبہ کریں ۔ کہ کیا ہم الْمُؤْمِنِين ہیں ؟ یا ابھی تک الَّذِينَ يُؤْمِنُونَ ہیں !۔ 

  رَبَّنَا اغْفِرْ لِي وَلِوَالِدَيَّ وَلِلْمُؤْمِنِينَ يَوْمَ يَقُومُ الْحِسَابُ (14:41)

 

اُفق کے پار بسنے والے دوستو  !۔


جمعرات، 29 جولائی، 2021

مرکزِ ملت ، عیسائیت و اسلامیت

٭٭٭٭٭٭
حیوانات بھی اپنی اپنی راہیں الگ بناتے ہیں ۔
 حیوانوں میں جو محکومیت پسند کرتے ہیں وہ کمزور ہوتے ہیں ۔ شیر جب جوان ہوتا ہے تو وہ اپنا فرقہ الگ بناتا ہے اور اُس فرقے کے اصول بھی خود طے کرتا ہے ۔ یوں ایک خاندان فرقہ در فرقہ میں تبدیل ہوتے جاتا ۔ کیوں کہ جانوروں کا مذہب نہیں ہوتا لہذا ، اُن کے درمیان یہ   طاقتور اور کمزور کے درمیان قبیلوں کی تقسیم کہتے ہیں۔
 اِسی اصول کی بنیاد پر انسانی حیوانات بھی قبائل در قبائل اور برادری در برادری میں تقسیم ہوتا گیا ۔ 
مذھب نے بھی یہی کیا جو لچھے دار باتوں کے ماہر ہیں ، اُنہوں نے پہلے سے لچھے دار باتیں بنانے والوں کی راہ چلتے ہوئے لوگوں کو اپنا گرویدہ بنانا شروع کیا ۔ کیوں کہ وہ طاقتور نہیں ہوتے تھے لہذا قبیلے کے طاقتوروں نے اُنہیں اپنے مفاد کے لئے پالنا شروع کر دیا ۔
 جب اِن لچھے دار باتیں بنانے والوں نے قبیلے کے طاقتوروں کو اُپنے سننے والوں کی تعداد سے متاثر ہو کر خود کو طاقتور بنانے کی کوشش کی تو وہ جلاوطن کر دیئے گئے یا پھانسی پر لٹکا دئے گئے ۔ اُن کے مریدوں نے وہ لچھے دار باتیں اندرونی سطح پر پھیلانا شروع کر دیں ۔ طاقتورں نے نئے لچھے دار باتیں بنانے والوں کو اپنے گروپ میں شامل کیا تو نئے لچھے دار باتیں بنانے والوں اپنے سننے والوں کا نیا گروپ تشکیل دیا ۔ یوں تفریق در تفریق بڑھتی گئی ۔
 پرانی اور نئی لچھے دار باتوں کو اپنے فہم کے مطابق انسانوں نے اصولوں کی شکل دی اور پھر اُنہیں کتابوں کی صورت میں ڈھال دیا ۔
 تاریخ میں درج ہے کہ1604 میں بائیبل کے 66 نسخے تھےجو 66  سینٹ تھے     ۔یہ  ایڈم سے شروع ہوئے ، نوحا ، ابراہم اور لوٹ سے گذرتے ہوئے کرائسٹ کو  صلیب  پر چڑھانے کے بعد  ختم ہوئے  ۔
 گویا 66 تفریقی گروپس تھے 1911 میں اِن تمام کتب کو اکٹھا کرکے ایک مستند نسخہ کنگ جیمس نے بنایا اور دولت کے بل پر پوری عیسائیت  جماعت میں پھیلا دیا گیا۔
 یوں عیسائیوں میں لچھے دار باتیں بنانے والوں کا 1929 میں اختتام ہوا ۔ جب ویٹیکن سٹی میں چرچ کو ایک متفقہ عبادت گا بنا لیا ۔
مذہب اسلام کا یہ دعویٰ ہے کہ یہ آدم کے ساتھ زمین پر آیا اور بنی آدم میں رسولوں اور نبیوں کے ہمراہ چلتا ہوا ہیکلِ سلیمانیہ کی بنیادوں سے گذرتا ہوا ، یروشلم کے عیسائی عبادت گا کو قبلہ بناتا ہوا ۔
 مکّہ میں کعبہ ہر آکر ٹہر گیا جہاں لات ،منات اور عزہ کے معبد 360 ہمرایوں کے قائم تھے ۔
اسلامیت کے پرچاروں کابھی یہی دعویٰ تھا کی اُن کی تمام کتابوں  اور صحیفوں  کو ایک جگہ کمپائل کرکے قرآن نامی کتاب  مصحفِ عثمانی وجود میں لائی گئی ۔جس کی صرف  7 فوٹو کاپیاں  مملکت میں بھجوادی گئیں ۔
  یوں مذہبی تفرقہ بازوں کی لچھے دار باتوں کا ویٹیکن سٹی اور کعبہ میں اختتام ہو گیا  اور اسلامیت  میں بھی تفریق ختم ہو گئی ۔کالے اور گورے برابر قرار دیئے گئے ۔ امیر طبقہ  اور غریب  طبقہ دولت کی مساوی تقسیم کے باعث متوسط طبقے میں تبدیل ہوگئے ۔
تمام پڑھنے والے تالیاں بجائیں ۔
  لیکن مسئلہ یہ ہوا ۔ کہ
 لچھے لچھےدار باتوں کا ایک گروپ ، مدینہ سے جان کے خوف سے بھاگ کر ،  کوفہ میں بننا شروع ہوا ۔
 اُس گروپ کے لوگ ماورالنہر کے شہروں تک پہنچ گئے ، جن میں ماوراء النہر کے اہم ترین شہر سمرقند اور بخارا،خجند،شیستان ، نیشاپور ، قزوین اور ترمذ شامل تھے۔ 
لچھے دار باتوں کے بنانے والوں میں بھی فرقے بننے شروع ہو گئے ۔ ہر فرقہ خود کو دوسرے سے افضل سمجھتا ، اِن لچھے دار باتیں بنانے والوں کو بھی ملک بدر کیا گیا ، زندان خانوں میں ڈالا گیا اور غالباً زہر دیا گیا ، قتل کیا گیا ۔ اں کے بھی متبعین وہاں سےبھاگے اور 10 لاکھ آبادی کے شہر بغداد 66  میں تو نہیں البتہ 15یا 20  لچھے دار باتیں بنانے والوں کے مرکز بن گئے ۔ 
یہاں تک کہ ہلاکو خان نے سب لچھے دار باتیں بنانے والوں اور اُن کی باتیں سن سن کر سر دھننے والوں کو دریائے فرات میں اُن کی کتابوں سمیت بالکل ایسے بہایا جیسے  آج کل کرونا انسانوں کو بہا رہا ہے ۔
 لیکن کیا کیا جائے ؟ 
 اسلامیت   کا  سٹی موجود ہے ۔ مسلمانوں کی متفقہ کتاب موجود ۔ 
لیکن افسوس لچھے دار باتیں بنانے والوں کے گروپس کے گروپس بنتے جا رہے ہیں ۔ 
پاکستان کے رہنے والے مسلمان ، تمام مسلمانوں کےمتفقہ سٹی کے حکمرانوں کو خود سے الگ گروپ سمجھتے ہیں اور کیوں نہ سمجھیں ؟
 کہ یہ گروپ بھی بغدادی گروپ کا دیوانہ  اور وہابی فرقہ ہے  ۔ 
سنا ہے کہ اب آئندہ حکومت لینے والا نیا حکمران ، بغدادی لچھے دار باتیں بنانے والوں کو پسِ پشت ڈال کر  قرآن  کو ترجیح دینے کی کوششوں میں انٹرویو دے رہا ہے ۔
 تاکہ عیسائیوں کی طرح مسلمانوں کو بھی امت واحدہ پر لائے ۔ لیکن ایک بات وہ بھول رہا ہے کہ اِس کے لئے اُسے اپنے متفقہ  سٹی پر ابھرنے والے چاند کے تہواروں کو پورے گلوب پر  ویٹیکن سٹی کے کرسمس کے تہوار کی طرح ایک دن  قرار دینا ہوگا ۔
 ٭٭٭٭

بدھ، 28 جولائی، 2021

الدِّينِ میں فَقَّهُ کے لئے كُلِّ فِرْقَةٍ (الْمُؤْمِنُونَ ) میں سے طَآئِفَةٌ نفر کرے ۔

 مُحَمَّد رَّسُولَ اللَّـهِ وَخَاتَمَ النَّبِيِّينَ نے حدیث کی۔

وَمَا كَانَ الْمُؤْمِنُونَ لِيَنفِرُواْ كَآفَّةً فَلَوْلاَ نَفَرَ مِن كُلِّ فِرْقَةٍ مِّنْهُمْ طَآئِفَةٌ لِّيَتَفَقَّهُواْ فِي الدِّينِ وَلِيُنذِرُواْ قَوْمَهُمْ إِذَا رَجَعُواْ إِلَيْهِمْ لَعَلَّهُمْ يَحْذَرُونَ ‎[9:122]


 اِس کے متعلق میرا فہم یہ ہے۔

 : وَمَا كَانَ الْمُؤْمِنُونَ لِيَنفِرُواْ كَآفَّةً ۔

 الْمُؤْمِنُونَکے لئے یہ ہو نہیں سکتا کہ وہ كَآفَّةً ، نفِرُ کرتے رہیں گے ۔

فَلَوْلاَ نَفَرَ مِن كُلِّ فِرْقَةٍ مِّنْهُمْ طَآئِفَةٌ ۔

   پس کیوں نہیں كُلِّ فِرْقَةٍ (الْمُؤْمِنُونَ ) اُن میں سے طَآئِفَةٌ نفر کرے ۔

لِّيَتَفَقَّهُواْ فِي الدِّينِ۔

  تاکہ وہ (طَآئِفَةٌ) الدِّينِ  میں فَقَّهُ  کریں ۔ 

وَلِيُنذِرُواْ قَوْمَهُمْ إِذَا رَجَعُواْ إِلَيْهِمْ  ۔

 اور اُن کی قَوْمَ  کے لئے  وہ نذِرُکرتے رہیں گے ۔ جب وہ اُن کی طرف رَجَعُ کریں گے ۔

لَعَلَّهُمْ يَحْذَرُونَ ۔  

 تاکہ وہ  (الْمُؤْمِنُونَ  رَجَعُ  کرنے والی قَوْمَسے  ) چوکس رہیں۔ 

کتاب اللہ میں ۔ اختلاف کے باعث فریق بنتے رہتے ہیں ۔ یہ فرق مثبت بھی ہو سکتا ہے اور منفی بھی ، نفِرُ کی کامیابی کے لئے  كَآفَّةً  سے کامیابی نہیں ہوگی ۔ بلکہ ، كُلِّ فِرْقَةٍ (الْمُؤْمِنُونَ سے طَآئِفَةٌ لے کر نفِرُ  کیا جائے ۔

٭٭٭٭٭٭

اتوار، 18 جولائی، 2021

۔ مرزا اسلم بیگ ۔ سابق چیف آف دی آرمی سٹاف

‏سابق آرمی چیف جنرل اسلم بیگ نے اپنی سوانح عمری کا نام ''اقتدار کی مجبوریاں‘‘ رکھا ہے اور شاید انہیں مجبوریوں کی وجہ سے انہوں نے ریٹائرمنٹ کے بعد تیس سال تک کچھ اہم معاملات پر خاموشی اختیار کیے رکھی۔
 

بقول مصنف ،’’یہ کتاب جنرل بیگ کی مخصوص سوچ و فکر اور ان کے ایمان و ایقان کی دلچسپ داستان ہے‘‘

  جنرل صاحب نے جس راز سے پردہ اٹھایا ہے اگر یہ راز دس سال پہلے سامنے آ جاتا تو شاید ملک کے حالات آج ایسے نہ ہوتے
کٹھ پتلی حکومت  موجود نہ ہوتی معیشت تباہ  نہ ہوتی
 مہنگائی کا طوفان  نہ آتا
 بیروزگاری عام نہ ہوتی
 عوام خوار نہ ہو رہی ہوتی
جنرل مرزا اسلم بیگ نے سوانح عمری میں  یہ اعتراف کیا کہ سن 1964ء میں جنرل ایوب خان کے مقابلے میں محترمہ فاطمہ جناح کو زیادہ مقبولیت حاصل تھی لیکن انہیں دھاندلی کے ذریعے ہرا دیا گیا، جس سے مشرقی پاکستان کے عوام میں بددلی پھیلی۔
 1971ء تک فوج نے مشرقی پاکستان میں حالات کنٹرول کر لیے تھے، جس کے بعد لیفٹیننٹ کرنل مرزا اسلم بیگ نے تحریری طور پر لیفٹیننٹ جنرل امیر عبداللہ نیازی کو کہا کہ اب اقتدار سول انتظامیہ کے سپرد کر کے سیاسی عمل شروع کیا جائے۔
 یہ بات جنرل نیازی کو پسند نہ آئی کیوں کہ وہ طاقت کے نشے میں چور تھے۔ انہوں نے ایسے ریمارکس پاس کیے، جو ہمارے جنرل آفیسر کمانڈنگ کو پسند نہ آئے اور تلخ کلامی ہو گئی۔ تین دن کے اندر اندر کمانڈ تبدیل ہو گئی اور مرزا اسلم بیگ زیرعتاب آ گئے۔ انہیں واپس راولپنڈی بھیج دیا گیا۔

   جنرل اسلم بیگ ایک صوبیدار میجر کے بیٹے ہیں۔ ان کا طرہ امتیاز یہ ہے کہ وہ پاکستانی فوج کے پہلے آرمی چیف ہیں جن کی تربیت پی ایم اے میں ہوئی، ان سے پہلے تمام آرمی سربراہ برطانیہ کی رائل اکیڈمی سینڈہرسٹ کے تربیت یافتہ تھے۔ 

 وہ کہتے ہیں کہ حکمرانوں کو اقتدار اس حد تک بے بس کر دیتا ہے کہ وہ قومی غیرت کو بھی دا پر لگا دیتے ہیں۔جنرل بیگ کا کہنا ہے کہ جب اس کتاب کے عنوان کو تلاش کر رہے تھے تو ان کے ذہن میں سابق صدر جنرل محمد ضیا الحق کے یہ الفاظ بارہا گونجتے کہ ’’اقتدار کی کچھ مجبوریاں ہوتی ہیں‘‘۔ جنرل بیگ نے اس کتاب میں ان مجبوریوں کا ذکر اس طرح کیا ہے۔

 ٭۔ جنرل ایوب خان کی مجبوری تھی کہ انھوں نے اقتدار جنرل یحییٰ کے حوالے کر دیا۔

 ٭۔جنرل یحییٰ کی مجبوری تھی کہ وہ تین مارچ 1971 کو ڈھاکا میں قومی اسمبلی کا اجلاس بلانے کا اعلان کر کے اپنے وعدے سے منحرف ہوگئے۔ 

٭۔ جنرل ضیاالحق کی مجبوری تھی کہ انھوں نے اپنے وعدے کے خلاف بھٹو کی موت کے پروانے پر دستخط کر دیے۔

٭۔ جنرل پرویز مشرف کی مجبوری تھی کہ وہ غیروں کے ساتھ مل کر افغانستان کے خلاف جنگ میں شامل ہو گئے۔

 جنرل بیگ کا کہنا ہے کہ اقتدار کی ہوس میں ہمارے ارباب فکر ونظر اندیشہ سود و زیاں(آفیشل سیکرٹ ایکٹ 1923 )  کے تحت اپنی زبان بند رکھتے ہیں۔ حکمرانوں کوٹوکتے نہیں۔

یہ ہمارا المیہ ہے ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اس کتاب میں جو کچھ بیان کیا گیا ہے وہ میرے علم ( یعنی اسلم بیگ) کی حد تک سچ اور صرف سچ پر مبنی ہے اور سچائی کی وجہ سے میں نے کئی بار نقصان بھی اٹھایا۔ (سچ بولنے والے میجر تک پہنچ پاتے ہیں ۔ مہاجرزادہ)

بھٹو کی پھانسی کے پس منظر کا ذکر کرتے ہوئے جنرل بیگ کہتے ہیں، پھانسی کی سزا دینے سے پہلے جنرل ضیا الحق نے آفیسرز اور جوانوں کا ردعمل معلوم کرنے کے لیے تمام کور کمانڈرز کو جائزہ لینے کا کہا۔ کور کمانڈروں کے اجلاس میں، میں نے اپنی رائے دیتے ہوئے کہا کہ بھٹو کو پھانسی دینا نہایت ہی غلط فیصلہ ہوگا۔ اس کے نتائج سنگین ہوں گے، ایسی پیچیدگیاں پیدا ہو گی جنھیں سنبھالنا مشکل ہو گا۔ اس سے پنجاب اور سندھ کے لوگوں کے درمیان نفرتیں بڑھیں گی۔ بہتر ہوگا کہ بھٹو کو جلاوطن کر دیا جائے۔ان کے مطابق فلسطین کے یاسر عرفات، سعودی عرب کے شاہ فیصل ، لیبیا کے کرنل قذافی اور متحدہ عرب امارات کے حکمران یہ ذمے داری لینے کے لیے تیار تھے۔ میری اس بات سے کورکمانڈر ناراض ہوگئے۔ کانفرنس ختم کردی گئی۔ میری رائے چیف تک پہنچا دی گئی۔ میں انتظار میں تھا کہ میرے ساتھ اب کیا ہوگا۔ لیکن کوئی رد عمل سامنے نہ آیا۔

1987ء میں جنرل ضیا نے جنرل زاہد علی اکبر کو وائس چیف آف دی آرمی اسٹاف بنانے کا فیصلہ کیا لیکن وزیراعظم جونیجو نے جنرل مرزا اسلم بیگ کا نام تجویز کیا، جسے جنرل ضیا نے قبول کر لیا۔

 مجھے اس وقت بڑی حیرانی ہوئی جب چند روز بعد مجھے چیف آف جنرل اسٹاف تعینات کر دیا گیا۔ جنرل بیگ کا کہنا ہے کہ ’’ جنرل ضیا الحق نپولین جیسی فہم و فراست کے مالک تھے جو تنقید کرنے والوں کو اپنے ساتھ رکھتے تھے، وہ بے لاگ ، مخلصانہ اور حقیقت پسندانہ رائے سے فائدہ اٹھانا چاہتے تھے۔‘‘ 

اسلم بیگ صدر جنرل محمد ضیا الحق کے سیاسی نظام پر تبصرہ کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ ضیا الحق نے ملک کے لیے نیا سیاسی نظام تشکیل دینے کا ارادہ کیا، ان کی حکومت کو نو سال ہو چکے تھے۔ مجھے اور جنرل حمید گل کو یہ ذمے داری دی گئی کہ ہم تفصیلی جائزہ لینے کے بعد رپورٹ پیش کریں۔ہماری سفارشات پڑھنے کے بعد ضیا الحق نے بحث کے لیے ہمیں بلایا۔ 

ہماری رائے تھی کہ ’’اب وقت آگیا ہے کہ صاف ستھرے الیکشن کرا کے اقتدار عوامی نمایندوں کو منتقل کر دیا جائے، اس سے قوم آپ کواچھے الفاظ سے یاد رکھے گی‘‘۔ ضیا الحق کچھ دیر سوچتے رہے، پھر بولے،’’چاہتے ہو کہ پھانسی کا پھندا میرے گلے میں ہو‘‘۔ میں نے کچھ معروضات پیش کرنا چاہیں لیکن اجازت نہ ملی۔ ہم خاموش ہوگئے۔

جنرل ضیا الحق نے غیر جماعتی بنیادوں پر انتخابات کرا دیے اور محمد خان جونیجو کی حکومت قائم ہوگئی۔ افغان مسئلے کا ذکر کرتے ہوئے جنرل اسلم بیگ اس کتاب میں کہتے ہیں۔

٭۔ سوویت یونین کی دائمی خواہش تھی کہ وہ افغانستان کے ذریعے ، پاکستان کے راستے گوادر کے گرم پانیوں تک پہنچے۔

٭۔ دوسری طرف امریکی گیم پلان تھا کہ وہ یوریشیا پر کنٹرول حاصل کرے تاکہ پوری دنیا اس کی دسترس میں ہو۔ 

امریکا کو اس منصوبے پر عمل کرنے کے لیے افغانستان کی ضرورت تھی۔ افغانستان میں امریکا اور سوویت یونین کی اس متصادم پالیسی میں پاکستان نے امریکی جارحیت کا ساتھ دیا۔اس جنگ کی اصل قوت افغانستان اور پاکستان کے پختونوں کے ساتھ ساتھ دنیا بھر کے ستر ممالک سے آئے ہوئے سرفروش جہادی تھے جنھوں نے سوویت یونین کو شکست دی ۔دس سال کی طویل جنگ کے بعد روس کو احساس ہوا کہ وہ یہ جنگ نہیں جیت سکتا، بالآخر روس بے بس ہو گیا اور اپنی فوجیں نکالنے پر مجبور ہوا۔افغانستان سے روس کے نکلنے کے بعد امریکا نے بھارت کے ساتھ مل کر چین کا گھراؤ کرنے کا فیصلہ کیا اور اس عمل میں پاکستان کو بھی دباؤ کا شکار کیاَ۔

٭۔ دوسری طرف افغان قوم اپنی تقدیر کا خود فیصلہ کرنا چاہتی تھی۔امریکا نے افغانستان پر کنٹرول کرنے کے لیے طالبان پر تمام حربے استعمال کیے لیکن وہ اپنے موقف سے نہ ہٹے۔ طالبان کا موقف تھا کہ امریکا افغانستان سے نکل جائے اور افغانی عوام اپنی قسمت کا فیصلہ خود کریں۔امریکا اپنی تمام تر کوششوں کے باوجود افغان نوجوان قیادت کو زیر نہ کرسکا ۔امریکا نے یوٹرن لیا اور طالبان کو دہشت گرد قرار دینا شروع کر دیا۔

٭۔  جنرل اسلم بیگ کا کہنا ہے کہ طالبان افغانستان کی اجتماعی مدافعتی قو ت کا نام ہے جس کے سامنے دنیا کی دو سپر پاور شکست کھا چکی ہیں۔ 

 اس کے علاوہ اس کتاب میں جنرل محمد ضیاالحق کے C-130 جہاز کے حادثے میں جاں بحق ہونے کے حوالے سے اسلم بیگ کا نقطہ نظر واضح طور پر بیان کیا ہے۔ پاکستان کی ایٹمی صلاحیت اور ڈاکٹر قدیر خان کے خلاف الزامات کی نوعیت کا تذکرہ بھی ہے۔

جنرل مرزا اسلم بیگ نے اعتراف کیا ہے کہ پاکستان کو ایٹمی قوت بنانے میں اہم کردار ادا کرنے والی پانچ شخصیات کے ساتھ اس ملک میں بہت ظلم ہوا۔
 جنرل صاحب نے ذوالفقار علی بھٹو کے بارے میں کہا ہے، ''انہیں عدالتی قتل کے ذریعے ختم کیا گیا۔
ڈاکٹر عبدالقدیر خان بدترین تضحیک کا نشانہ بنائے گئے۔
 محترمہ بے نظیر بھٹو نے ہماری ایٹمی قوت میں منطق اور ٹھہراؤ کا عنصر شامل کیا لیکن دہشت گردی کا شکار ہو گئیں۔
 میاں محمد نواز شریف کے بارے میں جنرل بیگ نے صفحہ 245 پر کہا ہے، ''انہوں نے امریکی دباؤ  اور ڈالروں کی لالچ کو پس پشت ڈال کر ایٹمی دھماکے کر کے بھارت کو موثر جواب دیا لیکن آٹھ سال جلاوطن رہے۔ دوبارہ وزیراعظم بنے لیکن پھر سازش کے تحت انہیں کرسی اقتدار سے الگ کر دیا گیا
ذوالفقار علی بھٹو کی پھانسی کو عدالتی قتل اور نواز شریف کے خلاف عدالتی فیصلے کو سازش قرار دے دیا۔

1988ء کے انتخابات کے بعد محترمہ بے نظیر بھٹو وزیراعظم بن گئیں۔ مرزا اسلم بیگ نے محترمہ کے ساتھ اپنے ذاتی اختلافات کو پس پشت ڈال کر اعتراف کیا ہے کہ 1990 کے اوائل میں بھارت نے ہماری ایٹمی تنصیبات تباہ کرنے کا منصوبہ بنایا تو محترمہ نے صاحب زادہ یعقوب علی خان کو دہلی بھیجا اور بھارت کو پیغام دیا کہ باز آ جاؤ ورنہ تمہاری تنصیبات تباہ کر کے رکھ دیں گے
 محترمہ بے نظیر بھٹو نے بڑی دانشمندی سے نیوکلیئر پالیسی آگے بڑھائی۔ اس دور میں محترمہ کی اجازت سے بھارت کے خلاف لائن آف کنٹرول پر ایک کامیاب سرجیکل اسٹرائیک کی گئی۔
محترمہ بے نظیر بھٹو پہلی وزیراعظم تھیں، جو سیاچین کے بلند ترین محاذ کے دورے پر گئیں۔
فوج کے ایک سابق سربراہ کے خیال میں نہ تو ذوالفقار علی بھٹو غدار تھے، نہ ہی محترمہ بے نظیر بھٹو سکیورٹی رسک تھیں اور جو کچھ نواز شریف کے ساتھ ہوا، وہ سب ایک سازش تھی۔
جنرل اسلم بیگ نے حقائق سے پردہ اٹھا دیا اور ساتھ میں یہ بھی بتا دیا کہ پاکستان کی ترقی کی راہ میں اصل رکاوٹ کون لوگ ہیں
 جو اپنے مفاد کے لیے ملک کے وزیراعظم کو پھانسی بھی دیتے ہیں
ملک کے وزیراعظم کے خلاف بہت سے کیسز بنا کر اس کو وزیراعظم ہاؤس سے بھی نکلوا دیتے ہیں
 اس کو سزا بھی دلوا دیتے ہیں اور صرف اور صرف سوئس  بینکوں میں اپنے اکاؤنٹ بھرنے کے لئے۔ پاپا جان پیزا بنانے کے لیے ۔آسٹریلیا میں جزیرہ خریدنے کے لئے   ملک جائے بھاڑ میں ان کے اکاؤنٹ ڈالروں سے ہونے چاہیے۔

٭٭٭٭٭

مزید پڑھیں  :۔

٭-اللہ حافظ ، میں تو اپنے جہاز میں جا رہا ہوں ۔

٭۔ جنٹلمین محترمہ فاطمہ جناح

بدھ، 14 جولائی، 2021

بجلی کے کھمبے اور معصوم بچے

دو دن پہلے  میرپورخاص کے دوستوں کے وٹس ایپ گروپ پر اِس کیپشن کے ساتھ یہ تصویر ملی :۔

ہم نے جو ٹیکنالوجی سندھ میں لائی وہی ٹیکنالوجی پورے پاکستان اور کشمیر میں لانا چاہتے ہیں۔ 


 آج صوبہ بلوچستان کے ضلع جھل مگسی  سے ملنے والی اِن تصاویر نے دہلا دیا :۔


 جہاں بجلی کے تار ایک لکڑی کے کھمبے پر نصب تھیں،کھمبا، قریب گزرنے والے بچوں کے اوپر گرنے سے دو بچے کرنٹ لگنے سے جھلس گئے،طبی سہولیات کی عدم دستیابی کے باعث گھبرائی ہوئی مصیبت زدہ ماں نے فوری طبی امداد کے لئے بچوں کو مٹی میں دبا دیا،چند ہی لمحوں میں بچوں کی روحیں پرواز کرگئیں۔

 یاد رھے ۔

جھل مگسی کے نواب نہ صرف قیام پاکستان سے ایم پی اے ،ایم این اے اور سینٹر بنتے آرھے ہیں، بلکہ بلوچستان کے وزیراعلی اور گورنر تک رھے، ان سب کے باوجود فوری طبی امداد تو دور کی بات بد قسمت مکینوں کو اس دور جدید میں لوہا یا سیمنٹ تک کے کھمبے بھی میسر نہیں ۔

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک ٹن ۔ سوا ٹن اور دو ٹن ائر کنڈیشنرز

ائیر کنڈیشنر کی ٹھنڈک کی پیمائش،ٹن  میں کیوں کی جاتی ہے؟
اے-سی  کی ٹھنڈک کی پیمائش کیلئے ٹن کی اکائی استعمال کرنے کے پیچھے دلچسپ تاریخ ہے۔ قدیم دور میں جب ائیرکنڈیشنر جیسی ٹیکنالوجی کا کوئی تصور نہیں پایا جاتا تھا تو گھروں کو ٹھنڈا کرنے کیلئے برف کا استعمال کیا جاتا تھا۔

 دور دراز پہاڑوں سے لائی جانیوالی اس برف کو امراءکے گھروں کو ٹھنڈا کرنے کیلئے استعمال کیا جاتا تھا۔ کیونکہ یہ برف ٹنوں کے حساب سے لائی جاتی تھی، لہٰذا ٹھنڈک کی پیمائش بھی ٹنوں میں کی جانے لگی۔

 ایک ٹن کے ائیرکنڈیشنر سے مراد ایک ایسا ائیرکنڈیشنر ہے جو فی گھنٹہ 12000 برٹش تھرمل یونٹ (BTU) حرارت آپ کے کمرے سے نکال سکتا ہے۔ ایک بی ٹی یو سے مراد اتنی حرارت ہے جو ماچس کی ایک تیلی کو مکمل طور پر جلائے جانے سے حاصل ہو سکتی ہے۔

اگر آپ کے پاس ایک ٹن برف ہو تو اسے مکمل طور پر پگھلنے کیلئے 288000بی ٹی یو حرارت کی ضرورت ہو گی ۔اگر ایک ٹن برف 24 گھنٹے میں مکمل طور پر پگھلانا ہو تو اسے 288000 بی ٹی یو حرارت 24 گھنٹے کے درمیان فراہم کر نا ہو گی، جو کہ فی گھنٹہ تقریباً 12 ہزار بی ٹی یو بنتی ہے۔
اس حساب سے آپ یہ کہہ سکتے ہیں کہ آپ کا ایک ٹن کا اے-سی ایک گھنٹے میں تقریباً 12 ہزار بی ٹی یو حرارت کو کمرے سے نکال باہر کرتا ہے-
یہی وہ کلیہ ہے جس کے تحت جب ایئر کنڈیشن ایجاد ہوئے تو ان کی ٹھنڈک کی پیمائش کرنے لیے ہوا ناپنے کے کسی یونٹ کے بجائے ٹن کا یونٹ استعمال کیا جانے لگا۔
1.0 ton = 12000 BTU/HR
1.5 ton = 18000 BTU/ HR
2.0 ton = 24000 BTU/HR
اب تھوڑی سی معلومات اس بارے کہ کتنے روم سائز کیلیئے کتنے ٹن کا اے۔سی خریدنا چاہئے۔
اس کیلئے کمرے کا کیوبک فیٹ سائز معلوم کر لیں۔
یعنی۔
لمبائی X چوڑائی X اونچائی
فرض کریں۔۔کہ، کمرے کی لمبائی، چوڑائی اور اونچائی سب 10 فٹ ھے تو اس حساب سے کمرے کا سائز 1000 کیوبک فیٹ بنےگا۔
اس فارمولے کو مدنظر رکھتے ہوئے اس کمرے جس میں اے۔سی لگانا ھو اس کا سائز معلوم کر لیں۔۔۔۔
اب روم کیوبک فیٹ سائز اور اے۔سی کتنے ٹن کا ہونا چاھیے۔۔۔۔
800 کیوبک فیٹ تک = 0.75 ٹن اے-سی
800 تا 1100 کیوبک فیٹ= 1 ٹن اے۔سی
1100 تا 1600 کیوبک فیٹ= 1.5 ٹن
1600 تا 2000 کیوبک فیٹ= 2.0 ٹن

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔