میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

اتوار، 30 ستمبر، 2018

ممبران - مزاح نگاراں برائے نثر

 ٭٭٭  مزاح نگاران کی محافل قہقہہ آور٭٭٭
نئے ممبران شرائط : 
٭- کو ئی بھی  بانی ممبر ،کسی نئے ممبر   کو  محفل میں مدعو کر سکتا ہے ۔  
٭-نیا ممبر محفل کےقواعد کے مطابق اپنی سہولت کے اعتبار سے ، محفل منعقد کرائے گا ۔
٭-  یہ محفل قواعد و ضوابط   کے مطابق ، صاحبانِ   عقل و فکر ، فہم و دانش  ،    مزاح نگاراں  ، برائے نثر  قائم کی گئی ہے -

٭٭٭نئے ممبران- 2018  ٭٭٭
ڈاکٹر ناہید اختر



 ٭
٭٭٭نئے ممبران- 2019  ٭٭٭
رحمٰن  حفیظ سلمان باسط سلیم مرزا قیوم طاہر فردوس عالم
 ٭
شہریار خان رحمت اللہ عامر امجد قیصرانی محمد ظہیر قندیل خرم شہزاد
 ٭
ڈاکٹر سائرہ بتول ڈاکٹر اشفاق ورگ ڈاکٹر شاہد اشرف حسیب الرحمٰن اسیر اعجاز جعفری
 ٭
ڈاکٹر محمد کلیم اعجاز خاور مبشّر سلیم

 ٭٭٭٭نئے ممبران- 2020  ٭٭٭
 
ارشدعلی  مرشد محترمہ شازیہ مفتی


  ٭٭٭
 ٭٭٭واپس جائیں  ٭٭٭

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔