Pages

میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

ہفتہ، 22 مارچ، 2014

بوڑھے کی پرچونی

 مئی 1990 کا ذکر ہے بڑھیا ، چھوٹی کو لے کر اپنے بابا کے ساتھ شور کورٹ اپنی بہن کی بیٹے کی ولادت پر ملنے گئی ، چم چم کی ماما ، ،ڈو کا بابا اور برفی کا بابا ، بوڑھے کے پاس رہ گئے ، اُن کی موجیں۔
ایک ہفتے کو چم چم کی ماما سے پوچھا کہ ، پپا آپ بچپن میں کیا کھایا کرتے تھے ۔ 
بوڑھے نے کہا جو ہم کھاتے تھے وہ آپ لوگ نہیں کھا سکتے ۔ 
برفی کے بابا نے پوچھا کیا وہ چیزیں اب بھی ملتی ہیں ۔ 
بوڑھے نے کہا جی بالکل ملتی ہیں ، 
برفی کے بابا نے کہا ، ہمیں دکھائیں ، وہ کیسی ہوتی ہیں ؟ 
بوڑھا اُن دنوں ، 3 سال کم 40 کا تھا ، چنانچہ اپنے تینوں بچوں کو اپنی ماضی کے دیس میں لے گیا ، جو حیدر آباد میں گھنٹہ گھر کے پاس تھا ۔ تینوں بچے حیران ، دکانوں پر ٹوکریوں میں پہاڑیوں کے ڈھیر کی طرح بوڑھے کا بچپن بکھرا ہوا تھا ۔بوڑھے نے اپنے بچپن کے دیس کے پہاڑوں کا تعارف کروانا شروع کردیا ۔
 یہ بتاشے ہیں ، وہ ریوڑیاں ، وہ کھٹی میٹھی گولیاں ، اور یہ تل پٹی۔
 وہ گول اور چپٹے مرونڈے ۔ یہ میوے کی چاکلیٹ ۔ 
یہ چھوٹے پیکٹوں میں مولی کا نمک ، کالا نمک ، یہ املی کے پیکٹ ۔چورن
وہ سفیدسفید  مخانے ، اُن کے ساتھ گجک اور  مونگ پھلی کی گڑ پٹی ۔
اِن پر مکھیاں بیٹھی ہیں ۔ یہ گندی ہیں ۔چم چم کی 10 سالہ ماما نے ناک چڑھاتے پوچھا۔ پپا آپ کیسے کھاتے تھے ؟
بوڑھے نے ایک بتاشہ اُٹھایا منہ میں ڈالا  اور کہا۔ ایسے ۔ 
میں ماما کو بتاؤں گی کہ آپ گندی چیزیں کھاتے تھے ۔
پپا میں کھالوں ۔ برفی کے بابا نے پوچھا۔ 
بوڑھے نے تین بتاشے اٹھائے اور تینوں بچوں کو دیئے ۔ چم چم کی ماما نے لینے سے انکار کر دیا ۔ لڈو کے بابا نے بوڑھے کی طرف دیکھا اورہاتھ میں پکڑ لیا۔ برفی کے بابا نے لیا اور منہ میں ڈالا ۔
گندے بچے ، منہ سے نکالو چم چم کی ماما نے 8 سالہ برفی کے بابا پر حکم چلایا ۔
 لڈو کا بابا ابھی سوچ رہا تھا ۔ اپیا یہ میٹھا ہے ۔ برفی کا بابا چلایا ۔ مزیدار بھی ۔ پپا ایک اور کھاؤں گا ۔
 بوڑھے نے چم چم کی ماما کا بتاشہ ، برفی کے بابا کو دے دیا اُس نے وہ بھی منہ میں ڈال لیا۔
 بھائی آپ بھی کھاؤ برفی کے بابا نے ، لڈو کے بابا کو مشورہ دیا ورنہ مجھے دے دو ۔ 
لڈو کے بابا نے بتاشے کو غور سے دیکھا ۔
 ثانی مت کھاؤ ۔ چم چم کی ماما چلائی ۔ مانی گندہ ہے ۔ تم اچھے بچے ہو ۔ میں ماما کو بتاؤں گی ۔ 
لڈو کے بابا نے بڑی بہن کی طرف دیکھا۔ 
چھوٹے بھائی کی طرف دیکھ۔ 
بوڑھے کی طرف سوالیہ نظروں دیکھا ۔
 تمھاری مرضی ، بوڑھے نے چار مخانے اُٹھائے  ایک برفی کے بابا کو دیا جو اُس نے فوراً منہ میں ڈال لیا ۔ 
ثانی یہ بھی میٹھا ہے  اور مزیدار بھی ۔
لڈو کے بابا نے بتاشہ منہ میں ڈالا ۔ ہاں اپیا یہ میٹھا  ہے  وہ بولا ۔ پپا اپیا کو بھی دیں ۔
بوڑھے نے  مخانا  چم چم کی ماما کی طرف بڑھایا وہ دوسری طرف منہ کرکے ناراضگی میں کھڑی ہو گئی ۔
میں آپ سب سے نہیں بولتی ۔ ثانی مانی آپ نے ماما کا حکم نہیں مانا کہ بازار سے کوئی گدی چیزیں لے کر مت کھانا بیمار پڑ جاؤ گے ۔چم چم کی ماما نے اپنے کمانڈنگ آفیسر کا بطورسیکنڈ اِن کمانڈ آرڈر بتایا اور خاموش کھڑی ہوگئی ۔
بوڑھے نے پاؤ پاؤ تمام مٹھائیاں سوئیٹس خریدیں ۔ ہر مٹھائی کے لئے برنیاں خریدیں ۔ ناراض چم چم کی ماما اور خوشی میں چہکتے برفی کے بابا اور مستقبل میں ماما کے روئیے پر سوچتا ہوا لڈو کے بابا سمیت گھر آگئے ۔
ساری چیزیں برنیوں میں ڈالیں۔ ہر پر اُس کا نام  اور فی بچہ ایک دن میں کتنی کھا سکتا ہے لکھا  اور ڈائینگ ٹیبل کے کونے پر سجا دیں ۔ برفی کے بابا کو انچارج بنایا گیا ۔کیوں کہ چھوٹی یعنی ایجوٹنٹ اپنی ماما کے ساتھ گئی ہوئی تھی ۔
     برفی کے بابا نے  چار  پلیٹوں  میں ، راشن کارڈ کے مطابق چیزیں نکالیں   ۔  تمام سوئیٹس ایک ایک ، پٹیاں ، چورن ، چوتھا حصہ ۔ پلیٹ بھر گئی ۔
پپا یہ آپ کی ،  یہ ڈولی ، ثانی اور میری ۔ برفی کے بابا نے تقسیم بتائی ۔
آپ سب بیمار پڑو گے پھر دیکھنا ۔ چم چم کی ماما بولی۔
اپیا ، میں نے کافی دیر پہلے میٹھی چیزیں کھائیں کوئی بیمار پڑا ۔برفی کا بابا بولا ۔ ثانی بھی ٹھیک ہے۔
صبح دیکھنا  تم دونوں پیٹ پکڑے ہو  گے ۔چم چم کی ماما  نے رائے دی ۔پپا کا کچھ نہیں ہوگا ، وہ یہ گندی چیزیں کھا چکے ہیں ۔
چم چم کی ماما نے وہ گندی چیزیں نہیں کھائیں۔ برفی کے بابا نے، لڈو کے بابا نے اور بوڑھے نے وہ چیزیں مزے سے کھائیں ۔ بوڑھا سو گیا ۔ شام کو اُٹھا تو دیکھا کہ چم چم کی ماما کی پلیٹ خالی ہے ۔ 
تو دوستو۔ ماماکی حکم عدولی میں چم چم کی ماما بھی شامل ہوگئی۔ 
    اگلے اتوار ، بوڑھا ، چم چم کی ماما ، لڈو کا بابا اوربرفی کا بابا  دوبارہ  بوڑھے کے دیس گئے وہاں سے اور چیزیں لیں ۔
 پھر بڑھیا آگئی ۔
یہ کیا آپ نے پرچونی سجائی ہے ؟  وہ بولی کوئی بیمار تو نہیں پڑا ۔
ماما ، پپا تو اپنے بچپن میں بڑی مزیدار چیزیں کھاتے تھے۔چم چم کی ماما بولی ۔
چھوٹی نے لپک   مخانے کی برنی اُٹھائی ۔ ماما یہ وہ سوئیٹ ہے نا جو میں وہاں کھاتی تھی     اور مٹھی بھر کر مخانے نکال لئے ۔ 
پنکی ، صرف ایک مخانا لینا ہے ۔ چم چم کا بابا چلایا ۔
یہ کیسی شاپ ہے ؟ بڑھیا نے چار بتاشے نکالتے ہوئے کہا ۔
بیگم یہ  Honour Shopہے اور اِس کا انچارج مانی ہے ۔
٭٭٭٭٭٭

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔